Page Nav

TRUE

Left Sidebar

False

تازہ ترین

latest

سودی بینک اور اسلامی بینک

سودی بینک اور غیر سودی بینک کا فرق اس  مثال سے بخوبی سمجھا جاسکتا ہے ایک شخص گاڑی لینا چاھتا ھے۔  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ سودی بینک کے پ...



سودی بینک اور غیر سودی بینک کا فرق اس  مثال سے بخوبی سمجھا جاسکتا ہے
ایک شخص گاڑی لینا چاھتا ھے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سودی بینک کے پاس جاتا ھے ۔کہ سودی بینک اس سے پوچھتا ھے کتنی رقم چاھئے۔ وہ کہتا ھے ۔ پندرہ لاکھ
بینک اس کو مطلوبہ رقم قرض دے دیتا ھے۔ اور  واپسی کی صورت یہ طے پاتی ھے۔ آپ نے بیس اقساط میں اٹھارہ لاکھ جمع کرنا ھے۔
اب اس سودی بینک نے پندرہ لاکھ کے قرض پر تین لاکھ جو منافع کمایا ھے یہ سودی ھے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر وھی شخص غیر سودی بینک کے پاس جاتا ہے تو وہ بینک تو رقم نہیں دے گا بلکہ بینک اس کے ساتھ اپنا نمائندہ بھیجے گا۔ گاڑی وہ بندہ پسند کرےگا اور خریدے گا بینک۔ خریدنے کے بعد بینک اس گاڑی پر قبضہ کرےگا۔ بینک نے یہ گاڑی مارکیٹ سے پندرہ لاکھ کی خریدی اور آگے اس کو بیس اقساط پر اٹھارہ لاکھ کی بیچی ۔ اس بینک نے جو نفع کمایا یہ جائز ھے۔سود نہیں۔کیونکہ یہ نفع قرض پر نہیں بلکہ گاڑی پر ھے۔


*سودی بینکوں کے ڈیپازیٹس کی شرعی حیثیت :*
سودی بینکوں میں جو رقوم رکھوائی جاتی ھیں۔
وہ شرعی لحاظ سے امانت نہیں بلکہ قرض ھوتی ھیں۔
اس کی دو وجوہات ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
1. امانت کو استعمال نہیں کیا جا سکتا ، جبکہ بینک وہ رقوم استعمال کرتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
2. امانت کی ضمانت نہیں ھوتی جبکہ بینکوں کےڈپازٹس قابلِ ضمانت ھوتے ھیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کے برعکس
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قرض کی رقم کو استعمال بھی کیا جاسکتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور اس پر ضمانت بھی ھوتی ھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لھذا ڈپازٹس کی رقوم ڈپازٹ ھولڈرز کی طرف سے بینکوں کو قرض ھیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
کسی بھی قرض پر اس کے اصل سرمایہ سے زائد کی ادائیگی سود کہلاتی ھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسری طرف بینک اپنے گاہکوں کو ان کی مختلف ضروریات کے پیشِ نظر قرضے دیتا ھے
اور اس پر اضافی رقم وصول کرتا ھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اضافی رقم بھی چونکہ قرض پر وصول کی جاتی ہے لھذا یہ سود ھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مفتی محمود الحسن صاحب