Page Nav

TRUE

Left Sidebar

False

تازہ ترین

latest

مختصر کہانیاں

ھﻤﺎﺭﮮ ﺍﯾﮏ ﺣﺎﻓﻆ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ* ﮐﻮ ﮔﺮﺩﻥ ﺗﻮﮌ ﺑﺨﺎﺭ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﺭﮈ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﺗﮭﯿﮟ.ﻋﻼﺝ ﺳﮯ ﮐﺎﻓﯽ ﺍﻓﺎﻗﮧ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ, ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺷﺎﻡ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﻣﺠ...


ھﻤﺎﺭﮮ ﺍﯾﮏ ﺣﺎﻓﻆ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ* ﮐﻮ ﮔﺮﺩﻥ ﺗﻮﮌ ﺑﺨﺎﺭ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﺭﮈ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﺗﮭﯿﮟ.ﻋﻼﺝ ﺳﮯ ﮐﺎﻓﯽ ﺍﻓﺎﻗﮧ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ, ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺷﺎﻡ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﻣﺠﮭﮯ ﻭﺍﺭﮈ ﮐﯽ ﻧﺮﺱ ﻧﮯ ﭨﯿﻠﯽ ﻓﻮﻥ ﭘﺮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﯽ ﺑﯽ ﺍﻭﻧﭽﮯ ﺍﻭﻧﭽﮯ ﮐﻠﻤﮯ ﭘﮍﮪ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ, ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﮭﺎﮔﺎ ﺟﺐ ﻭﺍﺭﮈ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﭘﯿﺎﺭﯼ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯿﮟ, ﯾﮧ ﻣﺮﺣﻮﻣﮧ ﻧﻤﺎﺯ, ﺭﻭﺯﮮ ﮐﯽ ﭘﺎﺑﻨﺪ ﺍﻭﺭ ﺣﺎﻓﻈﮧ ﺑﺘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ.
_____________________________
اﯾﮏ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺩﻝ ﮐﮯ ﻣﺮﺽ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺯﯾﺮ ﻋﻼﺝ ﺗﮭﺎ.ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺭﯾﮉﯾﻮ ﭘﺮ ﮔﺎﻧﮯ ﺳﻨﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﻐﻮﻝ ﺗﮭﺎ.ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﺮﺽ ﻻ ﻋﻼﺝ ﮬﮯ.ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﻗﺮﺁﻥ ﭘﺎﮎ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﮐﯽ ﺗﺮﻏﯿﺐ ﺩﯼ ﺗﻮ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﻓﻆ ﻗﺮﺁﻥ ﮨﻮﮞ.ﻗﺮﺁﻥ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﮬﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﮔﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺳﻨﺘﺎ ﮨﻮﮞ.ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮧ ﮐﻮﻧﺴﺎ ﮐﺎﻡ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮ? ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﮔﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻭﻗﺖ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﯿﮟ.ﺟﺐ ﻣﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﮔﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺁ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﻠﻤﮧ ﻧﺼﯿﺐ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ. ﮐﯿﺴﯽ ﺑﺪ ﻧﺼﯿﺒﯽ ﮬﮯ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﮐﻼﻡ ﮐﻮ ﮔﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﮐﻤﺘﺮ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﺗﻮ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﻠﻤﮧ ﺟﯿﺴﯽ ﻋﻈﯿﻢ ﻧﻌﻤﺖ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻣﯽ ﮨﻮﺋﯽ
_____________________________
ﺍﯾﮏ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺁﺧﺮﯼ ﻭﻗﺖ ﻣﯿﮟ'ﺭﯾﮉﺭ ﮈﺍﺋﺠﺴﭧ' ﻃﻠﺐ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﮕﻢ ﭘﺎﺱ ﮐﮭﮍﯼ ﮐﻠﻤﮧ ﮐﯽ ﺗﻠﻘﯿﻦ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ.ﺟﺐ ﻭﮦ ﻓﻮﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﮕﻢ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺭﯾﮉﺭ ﮈﺍﺋﺠﺴﭧ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﮐﺎ ﺑﮩﺖ ﺷﻮﻕ ﺗﮭﺎ, ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﯾﮧ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﭼﯿﺰ ﺗﮭﯽ ﺍﺱ ﻟﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﻠﺐ ﺗﮭﯽ.
_____________________________
ﺍﯾﮏ ﺯﻣﯿﻨﺪﺍﺭ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﯾﮧ ﺩﺭﯾﺎﻓﺖ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺑﮭﯿﻨﺲ ﮐﻮ ﭼﺎﺭﺍ ﮈﺍﻻ ﮬﮯ? ﯾﮧ ﺷﮑﺎﯾﺖ ﺟﺐ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﺁ ﮐﺮ ﮐﯽ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﭼﻮﻧﮏ ﺍﭨﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﻤﺠﮫ ﻟﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺁﺧﺮﯼ ﻭﻗﺖ ﮬﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮭﯿﻨﺲ ﺍﻭﺭ ﭼﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺭﯼ ﮬﮯ ﺍﺱ ﻟﮯ ﻣﺮﺗﮯ ﻭﻗﺖ ﻭﮨﯽ ﭼﯿﺰ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﻠﻤﮧ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ.
_____________________________
ﺍﯾﮏ ﻣﺮﯾﺾ ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﺭﮈ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﺗﮭﺎ.ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﺮﺽ ﯾﮑﺪﻡ ﺷﺪﯾﺪ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ, ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻧﺮﺱ ﮐﻮ ﭨﯿﮑﺎ ﻟﮕﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ, ﻧﺮﺱ ﻧﮯ ﭨﯿﮑﺎ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﮔﻨﺪﯼ ﮔﺎﻟﯽ ﺩﯼ.ﻧﺮﺱ ﻧﮯ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﭨﯿﮑﺎ ﻟﮕﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭨﯿﮑﺎ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﮔﻨﺪﯼ ﮔﺎﻟﯽ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﻣﺮ ﮔﯿﺎ. ﺗﺤﻘﯿﻖ ﭘﺮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﮔﺎﻟﯽ ﺩﯾﻨﺎ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺗﮑﯿﮧ ﮐﻼﻡ ﺗﮭﺎ ﮨﺮ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﮔﺎﻟﯽ ﺩﯾﺘﺎ, ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﯾﮩﯽ ﭼﯿﺰ ﻧﺼﯿﺐ ﮨﻮﺋﯽ.
_____________________________
ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﺭﮈ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﮔﺮﺩﮮ ﻓﯿﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﺮﺍ.ﺗﯿﻦ ﺩﻥ ﺗﮏ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻧﺰﻉ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺭﮨﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺗﻨﯽ ﺑﺮﯼ ﻣﻮﺕ ﻣﺮﺍ ﮐﮧ ﭘﭽﮭﻠﮯ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﯽ ﻣﻮﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﯽ.میں ابھی بھی اسکا سوچوں تو مجھے خوف آجاتا ہے۔
مرنے سے پہلے دو دن ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﻨﮧ ﻧﯿﻼ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﻧﮑﻞ ﺁﺗﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﺩﺭﺩﻧﺎﮎ ﺁﻭﺍﺯ ﻧﮑﻠﺘﯽ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮔﻼ ﺩﺑﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ.
ﻣﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺯ ﻗﺒﻞ ﯾﮧ ﺣﺎﻟﺖ ﺍﺗﻨﯽ ﺷﺪﯾﺪ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ﻭﺍﺭﮈ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻣﺮﯾﺾ ﺑﮭﺎﮔﻨﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ, اسکا باپ آیا اور ترلے منتیں کرنے لگ پڑا کہ اسکو زہر کا انجیکشن لگا دیں۔ لیکن میں مانا نہیں کیونکہ بحثیت ڈاکٹر یہ میرا پیشہ ہی نہیں۔
اس نوجوان کی حالت جب برداشت سے باہر ہوئ تو ﺍﺱ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺷﻔﭧ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ. جہاں ایک دن بعد وہ اسی کربناک حالت میں مرگیا۔
بعد میں پوچھنے پر ﺍﺱ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﺧﻮﺵ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﮯ اپنی ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﻣﺎﺭﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﺭﻭﮐﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ کہ بدبخت ایسا نا کر تیری ماں ہے۔ ڈاکٹر صیب ﯾﮧ ﺑﺮﯼ ﻣﻮﺕ ﺍﺳﯽ ﮐﺎ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﮨﮯ.
_____________________________
ﺍﺳﺘﻐﻔﺮ اللہ
*یاد رکھیں انسان مرتے وقت وہی کام کرتا ہے جسکو دنیا میں وہ زیادہ سے زیادہ کرتا ہے .*
*اپنے آپ سے پوچھیے کہ میں کونسا کام سب سے زیادہ کرتی ہوں/کرتا ہوں
*اور وہی کام کرتے ہوئے موت آگئی تو کیا رب کو منہ دکھاسکونگی / سکونگا ۔
شرمندگی ھوگی یا خوشی ؟ آپکے ایک شیئر سے کسی کی زندگی سنور سکتی ہے شیئر کریں
*ایک دن مرنا ہے آخر موت ہے*
*کرلے جو کرنا ہے آخر موت ہے*
منقول...
picture: Alquds Mosque Philippines